جنرل باجوہ نے عمران کے خلاف تحریک عدم اعتماد کی حمایت کی، سابق سینیٹر مصطفیٰ نواز کھوکھر کا دعویٰ

28

جنرل باجوہ نے عمران کے خلاف تحریک عدم اعتماد کی حمایت کی، سابق سینیٹر مصطفیٰ نواز کھوکھر کا دعویٰ

 

اپریل 2022 سے، خان عدم اعتماد کے ووٹ کے ذریعے اپنی برطرفی کا اعلان کر رہے ہیں اور ریمارکس دیے گئے کہ یہ سب کچھ امریکی حمایت یافتہ سازش کا حصہ ہے۔

ایک سابق حکومتی معاون نے دعویٰ کیا ہے. کہ سابق آرمی چیف جنرل باجوہ نے سابق وزیراعظم عمران خان کے خلاف تحریک عدم اعتماد کی سہولت فراہم کی۔

پیپلز پارٹی کی اتحادی جماعت کے سابق سینیٹر مصطفی نواز کھوکھر نے سابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ پر الزام عائد کیا ہے. کہ انہوں نے وزیر اعظم خان کے حریفوں کے ساتھ مل کر انہیں عہدے سے ہٹانے کی سازش کی

 

عمران خان کو عہدے سے ہٹا دیا گیا۔

اپریل 2022 سے، خان عدم اعتماد کے ووٹ کے ذریعے اپنی برطرفی کا اعلان کر رہے ہیں. اور ریمارکس دیے گئے کہ یہ سب کچھ امریکی حمایت یافتہ سازش کا حصہ ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ ان کے سیاسی حریفوں کے ساتھ شراکت داری اور ملک کی عسکری اشرافیہ کی پشت پناہی سے کیا گیا تھا۔ تاہم حزب اختلاف اور فوج دونوں نے ان الزامات کی سختی سے تردید کی ہے۔

خان کا اثر اتنا اہم تھا. کہ سابق آرمی چیف پر ان کی تنقید نے ملک کے سیاسی نظام میں فوج کے کردار پر ایک بالکل نئی بحث شروع کر دی۔ قوم کے نوجوان اس بات کی مذمت کرتے ہوئے سامنے آئے کہ انہوں نے ‘ملکی سیاست میں کرپشن اور فوج کا غیر مرئی ہاتھ’ کا لیبل لگایا۔

مزید پڑھیں:  وزیراعظم کی شمسی توانائی سے بجلی پیدا کرنے کے فیصلے پر عملدرآمد کی منظوری

اپنی الوداعی تقریر کے دوران، جنرل باجوہ نے اپنے خلاف خان کے دعووں کو ایک بار پھر مسترد کیا. اور انہیں ‘جعلی’ قرار دیا، لیکن انھوں نے اعتراف کیا کہ ماضی میں، فوج کی سیاست میں ‘غیر آئینی’ مداخلت تھی جس نے شدید تنقید کی دعوت دی۔ انہوں نے مزید کہا کہ فوج اب سیاست کو آگے بڑھانے میں ایسا کوئی کردار ادا نہیں کرے گی۔

مصطفیٰ نواز کھوکھر کا جنرل باجوہ پر الزام

یہ معاملہ ایک بار پھر سامنے آیا ہے جب کھوکھر نے جنرل باجوہ پر عمران خان کے خلاف تحریک عدم اعتماد کی حمایت کا الزام لگایا تھا۔

ایک مقامی ٹی وی چینل کو انٹرویو دیتے ہوئے کھوکھر نے ریمارکس دیے. کہ گزشتہ سال ہونے والے سیاسی واقعات کی روشنی میں بہت سے شواہد سامنے آئے ہیں کہ جنرل باجوہ نے خان کے خلاف تحریک عدم اعتماد کی حمایت کی۔

انہوں نے پی ٹی آئی کے دور میں جنرل باجوہ کی بطور آرمی چیف توسیع پر بھی تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ اس عمل پر اسٹیبلشمنٹ کا ناقابل تردید اثر تھا۔ کھوکھر نے ریمارکس دیے کہ ان کی مدت ملازمت میں توسیع کی قانون سازی بہت اہم تھی کیونکہ یہ 12 منٹ کے اندر پاس ہو گئی تھی اور چونکہ باجوہ توسیع چاہتے تھے اس لیے اس سے متعلق قانون متعارف کرایا گیا۔

 

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.