فیصل آباد کا شہری خود کشی کے لئے تاریخی گھنٹہ گھر پر چڑھ گیا

ریسکیو اہلکاروں نے شہری عمران کی خودکشی کی کوشش ناکام بنادی

119

فیصل آباد کی تاریخی عمارت اور مشہور گھنٹہ گھر پر ایک شخص صبح 10 بجے چڑھ گیا، اور تاریخی عمارت پتھر توڑ کر نیچے پھینکتا رہا، اور گنبد کو شدید نقصان پہنچایا، جسے دیکھ کرعوام کا جم غفیر گھنٹہ گھر کے ارد گرد جمع ہوگیا۔گھنٹہ گھر کے قریب کھڑے عوام نے پولیس کو اطلاع دی، واقعے کی اطلاع ملتے ہی پولیس اور ریسکیو کی ٹیمیں جائے وقوعہ پر پہنچ گئیں، اور اسے نیچے اتارنے کی کوشش کرتے رہے۔شہری کو اتارنے کے لئے ریسکیو نے کرین منگوائی اور ریسکیو اہلکار گھنٹہ گھر کی چار منزلہ عمارت کے اوپر والے حصے تک پہنچ گئے، تاہم پہلے سے موجود شہری نے ریسکیو اہلکار کے ساتھ ہاتھا پائی شروع کردی، اور اسے عمارت سے پتھر توڑ کر مارتا رہا۔واقعے کی ویڈیو بھی وائرل ہوگئی، جس میں واضح طور پر دیکھا جاسکتا ہے کہ شہری اور ریسکیو اہلکار کے مابین تقریباً آدھا گھنٹہ ہاتھا پائی ہوتی رہی، اس دوران ریسکیو اہلکار کا حفاظتی لباس بھی نیچے گر گیا، تاہم اہلکار نے دیدہ دلیری کے ساتھ شہری کو قابو کئے رکھا۔ذرائع کا کہنا ہے کہ شہری عمارت سے نیچے چھلانگ مارنے کی دھمکیاں دیتا رہا، اور عمارت پر بنے گنبد پر ٹانگیں پھنسا کر بیٹھا رہا، تاہم آدھے گھنٹے کی تگ و دو کے بعد شہری کو رسیوں کے ساتھ باندھ کر عمارت سے نیچے اتار لیا گیا، اور اسے تھانہ کوتوالی منتقل کردیا گیا ہے۔پولیس حکام کے مطابق شہری کی شناخت عمران بتائی جاتی ہے، اور وہ ذہنی مریض لگتا ہے، جو خود کشی کی غرض سے عمارت پر چڑھا تھا۔واضح رہے کہ قدیم اور تاریخی گھنٹہ گھر کی عمارت 4 منازل پر مشتمل ہے، اور 100 فٹ لمبائی کی حامل اس عمارت کو برطانوی راج میں 1903 میں تعمیر کیا گیا تھا۔عمارت کے ارد گرد لوہے کا بنا حفاظتی حصار بھی ہے، جب کہ اس کی نگرانی کے لئے ایک چوکیدار بھی تعینات ہے، لیکن چوکیدار کا کہنا ہے کہ یہ شخص اسے بھاری پتھر مار کر عمارت کے اندر داخل ہوا، اور چوتھی منزل پر قائم مینار پر چڑھ گیا۔

مزید پڑھیں:  خاتون اپنی آخری رسومات کے دوران زندہ ہو گئی
جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.