جوہری معاہدے کی بحالی، قطر میں ایران امریکا بالواسطہ مذاکرات بے نتیجہ ختم

14

ایران اورامریکا کے درمیان قطر کے دارالحکومت دوحا میں جوہری معاہدے کی بحالی سے متعلق ہونے والے بالواسطہ مذاکرات بے نتیجہ ختم ہوگئے۔ فریقین کے درمیان متنازع امور پر کوئی اتفاق رائے نہیں ہوسکا۔

ان بالواسطہ مذاکرات میں رابطہ کار کا کردار ادا کرنے والے یورپی یونین کے سفیر اینریک مورا نے گزشتہ روز ایک ٹویٹ میں کہا کہ بدقسمتی سے ابھی تک مذاکرات میں پیش رفت نہیں ہوسکی تاہم امید ہے کہ ہم خطے میں جوہری عدم پھیلاؤ اور استحکام کا ایک معاہدہ طے کرنے اور فریقین کو مذاکرات کی میز پر واپس لانے کے لیے کام کرتے رہیں گے۔

فریقین میں ایک اہم نکتہ سپاہِ پاسداران انقلاب کو دہشت گرد تنظیموں کی فہرست سے نکالنے کا ایرانی مطالبہ ہے جس پر امریکا تیار نہیں۔ امریکی حکام کے مطابق ایرانی مذاکرات کار نے پرانے طے شدہ مسائل کے ساتھ نئے مسائل بھی اٹھائے ہیں جن کا 2015ء کے جوہری معاہدے سے کوئی تعلق نہیں۔

ایک امریکی عہدیدار کا کہنا ہے کہ امریکا اور یورپی اتحادیوں نے واضح کیا ہے کہ ہم فوری طور پر اس معاہدے پر عملدرآمد کے لیے تیار ہیں۔ ہم نے ویانا میں جے سی پی او اے (جوہری معاہدے) کے مکمل باہمی نفاذ پر بات چیت کی تھی لیکن اس پر پیشرفت کے لیے ایران کو اپنے اضافی مطالبات ختم کرنا ہوں گے۔

مزید پڑھیں:  کراچی:جولائی میں سب سے زیادہ بارش کا ریکارڈ کئی برس سے نہ ٹوٹ سکا

واضح رہے کہ امریکا کے سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ مئی 2018ء میں ایران سے طے شدہ جوہری معاہدے سے یک طرفہ طور پر دستبردار ہو گئے تھے اور انہوں نے ایران کے خلاف سخت اقتصادی پابندیاں عائد کر دی تھیں۔ گزشتہ سال اپریل سے دونوں ملکوں کے درمیان اس معاہدے کی بحالی کے لیے بالواسطہ بات چیت ہو رہی ہے جو تاحال سود مند ثابت نہیں ہو سکی ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.