کسانوں کی حمایت کرنے والے معروف بھارتی گلوکار قتل

42

بھارت کے معروف گلوکار اور کانگریس لیڈر سدھو موس والا کو پنجاب میں گولی مار کر ہلاک کر دیا گیا.

یہ واقعہ پنجاب کی جانب سے سدھو موس والا کی سیکیوریٹی واپس لینے کے ایک دن بعد پیش آیا۔

کانگریس لیڈر اور پنجابی گلوکار سدھو موس والا کو آج مانسا ضلع میں گولی مار کر ہلاک کر دیا گیا۔ فائرنگ سے دو دیگر افراد زخمی بھی ہوئے۔

یہ واقعہ پنجاب کی جانب سے مسٹر موس والا سمیت 424 افراد کی سیکیوریٹی واپس لینے کے ایک دن بعد پیش آیا۔

بھگونت مان حکومت کی جانب سے وی آئی پی کلچر کے خلاف کریک ڈاؤن کرنے کی مشق کے ایک حصے کے طور پر سیکیوریٹی کو واپس لے لیا گیا تھا۔

یہ حملہ اس وقت ہوا جب مسٹر موس والا اور ان کے دو دوست جیپ میں پنجاب کے گاؤں جواہر جا رہے تھے۔

مسٹر موسی والا کی گاڑی پر گولیوں کی بوچھاڑ کی گئی تھی، وہ اپنی سیٹ پر گرے ہوئے پائے گئے تھے اور بہت زیادہ خون بہہ رہا تھا۔ انہیں اسپتال لے جایا گیا جہاں ڈاکٹروں نے انہیں مردہ قرار دے دیا۔

شوبھدیپ سنگھ سدھو اپنے اسٹیج کے نام سدھو موس والا سے مشہور تھے۔ 28 سالہ نوجوان کا تعلق مانسا کے نواحی گاؤں موس والا سے تھا اور انہوں نے گزشتہ چند سالوں میں کئی سپر ہٹ گانے دیے۔

سدھو موس والا بھارتی پنجاب کے کسان دھرنے میں بھی کافی سرگرم رہے اور اس حوالے سے گیت بھی گائے جو کافی مقبول ہوئے۔

مزید پڑھیں:  پیپلز پارٹی نے عبوری وزیراعظم کے نام پر اتفاق رائے سے انکار کر دیا۔
جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.