سابق گورنر پنجاب لطیف کھوسہ کے بیٹے پر فائرنگ کا مقدمہ درج

حملہ آوروں کی عمریں 20 سے 22 سال کے درمیان تھیں

141

پولیس کے مطابق مقدمہ تھانا مسلم ٹاؤن میں اقدام قتل کی دفعات کے تحت درج کیا گیا ہے۔ مقدمہ زخمی وکیل سردار بلخ شیر کھوسہ کی مدعیت میں درج ہوا۔ایف آئی آر کے متن کے مطابق فائرنگ کرنے والے ملزمان موٹر سائیکل پر سوار تھے، جب کہ فائرنگ کرنے والے حملہ آوروں کی تعداد دو اور عمریں 20 سے 22 سال کے لگ بھگ تھی۔ حملہ آوروں نے گاڑی کا پیچھا کرکے ہم پر فائر کیا، جس سے گاڑی کا دائیں طرف کا شیشہ ٹوٹ گیا اور گولی بازو میں لگی۔ایف آئی آر میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ بلخ شیر کھوسہ کو والد کے سیاسی کیریئر کی وجہ سے پہلے بھی دھمکیاں ملتی رہی ہیں۔پولیس کا کہنا ہے کہ فائرنگ واقعے کی مختلف پہلوؤں سے تحقیقات کر رہے ہیں۔واضح رہے کہ فائرنگ کا واقعہ گزشتہ روز 23 جنوری بروز پیر کو مولانا شوکت علی روڈ نزدیک پنجاب یونی ورسٹی لاہور میں پیش آیا۔

مزید پڑھیں:  مظاہرین نے سری لنکا کا صدارتی محل اور اہم سرکاری عمارتیں خالی کردیں
جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.