حضرت عثمان غنیؓ کے دور کی پتھروں پر لکھی گئی تحریریں دریافت

27

حضرت عثمان غنیؓ کے دور کی پتھروں پر لکھی گئی تحریریں دریافت

حضرت عثمان غنیؓ کے دور کی پتھروں پر لکھی گئی تحریریں دریافت

سعودی عرب میں حضرت عثمان غنیؓ کے دور کی پتھروں پر لکھی گئی تحریریں دریافت ہوئی ہیں۔

خبر رساں ادارے کے مطابق سعودی عرب میں پتھروں پر لکھی گئی دو ایسی نادر اور نایاب تحریریں دریافت کی گئی ہیں جو صحابی رسول ﷺ اور تیسرے خلیفہ حضرت عثمان غنیؓ کے دور کی ہیں۔

رپورٹ کے مطابق یہ نایاب تحریریں مکہ مکرمہ کے نواح میں واقعہ پہاڑی علاقے عالیہ میں دریافت کی گئی ہیں۔

اس حوالے سے سعودی عرب کے محکمہ آثار قدیمہ کا کہنا ہے کہ یہ تحریریں 1400 سال قبل حضرت عثمان غنیؓ کے دور میں لکھی گئی تھیں۔

محکمہ آثار قدیمہ کا کہنا تھا کہ ان تحریروں میں حضرت عثمان غنیؓ کے بطور تیسرے خلیفہ نامزد ہونے کی اطلاع دی گئی ہیں۔

اسلامی نوادرات اور تحریروں میں مہارت رکھنے والی سعودی محققہ مشاعل عسیری کا کہنا تھا کہ صدیوں پہلے پتھروں پر لکھی گئی مذہبی عبارتوں سے اس دور میں اس علاقے کے لوگوں کی مذہبی سرگرمیوں کا پتا چلتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ بادیہ بنی عمرو کے علاقے کے پتھروں پر لکھی گئی ابتدائی اسلامی عبارتوں کو مملکت میں باقی اہم مادی یادگاروں میں سے سب سے اہم سمجھتی ہوں۔

انہوں نے وضاحت کی کہ بلاشبہ یہ تحریریں معلومات اور تاریخی حقائق کا ایک بڑا اور اصل ذریعہ ہیں جن کے اصل ہونے میں بھی کوئی شبہ نہیں ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ بادیہ بنی عمرو مملکت کے جنوب مغرب میں ایک اہم ترین آثار قدیمہ کی جگہوں میں سے ایک ہے جو مختلف تاریخی ادوار سے تعلق رکھنے والے بہت سے نوادرات کی موجودگی کو ظاہر کرتی ہے اور اس سے قبل کئی دیگر قدیم یادگاریں بھی دریافت کی جاچکی ہیں۔

مزید پڑھیں:  میچ کے دوران گراؤنڈ میں گھسنے والے تماشائی کے خلاف مقدمہ درج

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.