فلسطین، غزہ میں اسرائیلی لڑاکا طیاروں کے حماس کے ٹھکانوں پر حملے

16

فلسطین کے علاقے غزہ کی پٹی میں اسرائیلی لڑاکا طیاروں نے حماس کے فوجی ٹھکانوں کو گزشتہ روز پھر نشانہ بنایا ہے۔ اسرائیلی فوج کا الزام ہے کہ حماس کے زیر انتظام فلسطینی علاقے سے راکٹ فائر کیے گئے تھے۔

اے ایف پی نیوز ایجنسی کے مطابق اسرائیلی فوج کے ترجمان نے کہا کہ ان کے لڑاکا طیاروں نے راکٹ حملے کے جواب میں غزہ کی پٹی میں حماس کے متعدد ٹھکانوں کو نشانہ بنایا ہے۔ حماس کی جانب سے جنوبی اسرائیل میں اسرائیلی شہریوں کی جانب داغے گئے راکٹ کو اسرائیل کے فضائی دفاعی نظام نے روک دیا تھا۔

دوسری جانب حماس کے ترجمان حازم قاسم نے گزشتہ روز اسرائیلی طیاروں کے حملے میں کسی جانی نقصان کی اطلاع نہیں دی۔ اپریل میں بھی اسرائیلی لڑاکا طیاروں نے غزہ شہر پر بمباری کی تھی۔ 23 لاکھ آبادی پر مشتمل حماس کے زیر کنٹرول غزہ کا ساحلی علاقہ 2007ء سے اسرائیل کی ناکا بندی کی زد میں ہے۔

واضح رہے کہ جمعہ کو اسرائیلی فوج نے فلسطینیوں کی گاڑی پر فائرنگ کر دی تھی جس کے نتیجے میں تین فلسطینی شہید ہو گئے تھے۔ اسرائیلی فوج کا کہنا ہے کہ جنین کیمپ میں ہتھیاروں کی تلاش کے آپریشن کے دوران یہ تینوں افراد فائرنگ کی زد میں آئے تھے۔ شہید افراد میں حماس کا ایک کمانڈر بھی شامل ہے۔ اس کارروائی میں بارہ فلسطینی زخمی بھی ہوئے تھے۔

گزشتہ سال اسرائیل نے لڑاکا طیاروں کے ذریعے فلسطینی علاقوں میں 11 روز تک شدید بمباری کی تھی جس کے نتیجے میں 250 سے زائد نہتے فلسطینی شہید ہو گئے تھے۔

مزید پڑھیں:  پاکستانیوں کی سخاوت، نرم دلی اور مہمان نوازی بے مثال ہے، جرمن سفیر

اسرائیل نے 1967ء میں چھ روزہ جنگ کے دوران مغربی کنارے اور مشرقی بیت المقدس کے علاقوں پر قبضہ کرکے مشرقی بیت القدس کو بھی زیر قبضہ علاقے میں ضم کر لیا تھا جسے بین الاقوامی سطح پر تسلیم نہیں کیا جاتا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.