کراچی میں ضمنی انتخاب کے دوران ہنگامہ آرائی، ایک شخص جاں بحق اور متعدد زخمی

کراچی(تکبیر نیوز)شہر قائد کے حلقہ این اے 240 میں پولنگ کے دوران سیاسی جماعتوں کے درمیان تصادم

18

تکبیر نیوز کے مطابق تصادم لانڈھی نمبر چھ میں ہوا جہاں ایک سیاسی جماعت کے انتخابی کیمپ اکھاڑے گئے، کارکنوں کے درمیان تصادم ہوا، ہاتھا پائی ہوئی اور ڈنڈوں کا استعمال کیا گیا جس کے سبب متعدد لوگ زخمی ہوگئے۔ سیاسی جماعتوں کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ بھی ہوا جس کے سبب علاقے میں بھگدڑ مچ گئی اور بازار بند ہوگئے۔ہنگامہ آرائی کے بعد علاقے میں سخت کشیدگی پھیل گئی، پولیس کی ریپڈ رسپانس فورس کے کمانڈوز کی نفری علاقے میں پہنچ گئی اور جھگڑے پر قابو پانے کی کوششیں شروع کردیں۔ تصادم کے بعد رینجرز نے علاقے میں گشت شروع کردیا جب کہ سیاسی جماعتوں کے کارکنان مختلف پوائنٹس پر جمع ہوگئے۔ ایس پی لانڈھی نے کہا ہے کہ ہنگامہ آرائی پر قابو پانے کی کوششیں کررہے ہیں، موقع سے کچھ افراد کو حراست میں لیا ہے۔تصادم اور فائرنگ کے نتیجے میں لانڈھی پولنگ اسٹیشن نمبر 21 کا عملہ بھاگ گیا، نامعلوم افراد نے بیلٹ پیپرز توڑ دیے۔ لانڈھی میں اس وقت بھی وقفے وقفے سے فائرنگ جاری ہے۔ہنگامہ آرائی میں زخمی والے افراد کو جناح اسپتال منتقل کیا گیا جہاں ڈاکٹروں نے ایک شخص کے ہلاک ہونے کی تصدیق کردی۔ ڈائریکٹر جناح اسپتال شاہد رسول نے کہا کہ لانڈھی کے مختلف علاقوں سے اب تک چار زخمیوں کو لایا جاچکا ہے، ہلاک ہونے والے شخص اور چاروں زخمیوں کو گولیاں لگی ہیں۔اسی طرح تحریک لبیک (ٹی ایل پی) نے کہا ہے کہ سیاسی جماعت کے کارکنان نے ہمارے امیر سعد حسین رضوی کی گاڑی پر فائرنگ کی ہے۔یاد رہے کہ حلقہ این اے 240 کی نشست ایم کیو ایم پاکستان کے رکن قومی اسمبلی اقبال محمد علی خان کے انتقال کے باعث خالی ہوئی تھی۔ اس حلقے میں رجسٹرڈ ووٹرز کی تعداد 5 لاکھ 29 ہزار855 ہے۔ ضمنی انتخاب کے لیے 133 عمارتوں میں 309 پولنگ اسٹیشنز بنائے گئے ہیں۔

مزید پڑھیں:  کورونا کی ساتویں لہر، جاپان میں نئے کیسز کی یومیہ تعداد ایک لاکھ سے زائد
جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.