مونس الہیٰ پر منی لانڈرنگ کا مقدمہ درج

ایف آئی اے لاہور نے چوہدری مونس الہیٰ پر منی لانڈرنگ کا مقدمہ درج کرلیا ہے۔

27

یف آئی اے حکام نے بتایا کہ مونس الہیٰ کے خلاف منی لانڈرنگ کےشواہد ملنے کے بعد تحقیقات کافیصلہ کیا۔ایف آئی اے کی جانب سے بتایا گیا کہ مونس الہیٰ پر منی لانڈرنگ اور کرپشن کے الزامات ہیں۔ سیکریٹری پنجاب اسمبلی محمد خان بھٹی کے دو قریبی عزیزوں نواز بھٹی اور مظہر عباس کو بھی گرفتار کیا گیا ہے۔ ان افراد کے خلاف بھی مقدمہ درج کیا گیا ہے۔یہ بھی بتایا گیا کہ نواز بھٹی پنجاب اسمبلی میں نائب قاصد تھے۔ شوگر ملز میں انکوائری میں نواز بھٹی کا نام سامنے آیا تھا۔ رحیم یار خان میں الائیڈ شوگرملز گروپ میں نواز بھٹی 31 فیصد شئیرز کے مالک تھے۔ واضح رہے کہ وہ گریڈ ٹو کے ملازم ہیں۔مظہر عباس بھی 35 فیصد شئیرز کے مالک تھے۔رحیم یارخان شوگر مل کے ڈائریکٹرز کو انکوائری میں بلوانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔اسسٹنٹ ڈائریکٹر رانا فیصل منیر کو مقدمہ کا انویسٹی گیشن آفیسر بنا دیا گیا ہے۔مونس الٰہی،نواز بھٹی ،مخدوم عمرشہریار،طارق جاوید،واجد بھٹی اورسیکرٹری اسمبلی محمد خان بھٹی کے خلاف منی لانڈرنگ اورکرپشن کا مقدمہ درج ہوا ہے۔پاکستان پینل کوڈ کی دفعات34،109،420،68،471 اور اینٹی منی لانڈرنگ دفعات کے تحت مقدمہ درج کیا گیا۔مونس الہی کے2007 سے 2020 تک ریکارڈ کو دیکھتے ہوئے مقدمہ درج کیا گیا۔عمران خان کی حکومت نے شوگرانکوائری کمیشن کے تحت رحیم یار شوگر مل کیخلاف انکوائری شروع کروا رکھی تھی اور مونس الٰہی کے خلاف 7اگست 2020 سے انکوائری جاری تھی۔

مزید پڑھیں:  مختلف شہروں میں موسم سرما کی پہلی بارش، سردی مزید بڑھ گئی
جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.