سال نو کی خوشی میں فائرنگ سے ہلاکت کا پہلا کیس رپورٹ

37

نئے سال کی آمد کے موقع پر اتوار کی شب رات بارہ بجے کے بعد ڈسٹرکٹ کورنگی کے علاقے کورنگی ایک نمبر سیکٹر 32 بی میں نامعلوم سمت سے آنے والی گولی سر پر لگنے سے شدید زخمی ہونے والی 3 سالہ ثانیہ دختر مزمل جناح اسپتال میں دوران علاج زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے زندگی کی بازی ہار گئی، مقتولہ والدین کی اکلوتی اولاد تھی اور اس حوالے سے اہلخانہ میں شدید اشتعال پایا جاتا ہے۔

جناح اسپتال میں مقتولہ کے ورثا نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے بتایا کہ ثانیہ جھولے میں سو رہی تھی، اس کی والدہ اسے جھولے میں چھوڑ کر کچن میں دودھ لینے کے لیے گئی تھی، جب واپس آئی تو بچی کو جھٹکے لگ رہے تھے اور اس کے سر سے خون بہہ رہا تھا جس پر اسے فوری طور کورنگی 5 نمبر اسپتال لے گئے جہاں اس کے سر پر پٹی کرنے ک بعد جناح اسپتال منتقل کیا گیا۔
انھوں نے بتایا کہ ڈاکٹروں نے سٹی اسکین کرایا تو پتا چلا کہ ثانیہ کے سر میں گولی تھی جو دماغ میں پھنسی ہوئی تھی اور ڈاکٹروں کا کہنا تھا کہ بچی ہوش میں آئے گی تو اس کا آپریشن کیا جائے گا۔مقتولہ ثانیہ کی میت گھر پہنچی تو کہرام مچ گیا، والدین اپنی اکلوتی بیٹی کے ہوائی فائرنگ کی بھینٹ چڑھ جانے پر شدت غم سے نڈھال دکھائی دیے جبکہ اس موقع پر اہل محلہ اور رشتے داروں کی بھی بڑی تعداد موجود تھی اور ان کی جانب سے بھی واقعے پر شدید غم و غصے کا اظہار کیا گیا۔اس موقع پر اہل خانہ کی جانب سے حکومت سے مطالبہ کیا گیا کہ نئے سال کے دوران نامعلوم سمت سے چلنے والی گولیوں کی روک تھام کے لیے بیانات دینے کے بجائے عملی طور پر اقدامات اپنائے جائیں تاکہ شہری ان گولیوں کا نشانہ بننے سے بچ سکیں ۔

مزید پڑھیں:  پاک بھارت ٹاکرا؛ نسیم شاہ کی روتے ہوئے گراؤنڈ سے باہر جانے کی ویڈیو وائرل
جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.